Saturday, May 8, 2010

سچ تو یہ ہے کہ ہوئے پل کے جواں جنت می /sach to ye hai ke huye pal ke jawaan jannat men

سچ تو یہ ہے کہ ہوئے پل کے جواں جنت میں
اب بھی مل جائیں گے پیروں کے نشاں جنت میں
اپنی خلقت ہی سے ہوتے ہیں فرشتے معصوم
ایک ہی طرز پہ جیتے ہیں وہاں جنت میں
میں کہ انسان ہوں رکھتا ہوں زمینوں کا خمیر
ٹکتے ہیں صاحب ادراک کہاں جنت میں
ہم نشینی ہے تری جنت و دوزخ سے الگ
کون سمجھے گا وہاں میری زباں جنت میں
حور و غلمان برابر تو نہیں ہو سکتے
یعنی ہے معاملہ سو د و زیاں جنت میں
تو یہاں رہتا ہے ہر لمحہ رگ جان کے قریب
کیوں میں تعمیر کروں اپنا مکاں جنت میں
********

Labels:

1 Comments:

At June 10, 2010 at 8:45 PM , Blogger इस्मत ज़ैदी said...

आदाब अर्ज़ है , सब से पहले तो उर्दू पढ़ने का मज़ा आ गया,
एक अलग अंदाज़ की ग़ज़ल से रूशनास हुए क़ारईन

 

Post a Comment

Subscribe to Post Comments [Atom]

<< Home