Thursday, April 22, 2010

سنا ہے نرغہ اعدا ہے ریگ زاروں میں

سنا ہے نرغہ اعدا ہے ریگ زاروں میں
یہ کون یکھ و تنہا ہے ریگ زاروں میں
چھپا ہے صحرانوردی میں ایک عالم عشق
برہنہ خوشبوے لیلا ہے ریگ زاروں میں
سکون بخش نہیں گھر کے یہ در و دیوار
ہمارا ذہن بھٹکتا ہے ریگ زاروں میں
وہ فتحیاب ہوا پھر بھی ہو گیا رسوا
وہ سر کتا کے بھی زندہ ہے ریگ زاروں میں
حیات موت کا لقمہ بنے تو کیسے بنے
کوئی تو ہے جو مسیحا ہے ریگ زاروں میں
سمندروں کا سفر کر رہا ہے مدّت سے
وہ انقلاب جو پیاسا ہے ریگ زاروں میں
وہ ایک دریا ہے کیا جانے ریگ گرم ہے کیا
اسے تو ہو کے نکلنا ہے ریگ زاروں میں
درخت ایسا ہے جس کی جڑیں فلک پر ہیں
مگر وہ پھولتا پھلتا ہے ریگ زاروں میں
*********

Labels:

1 Comments:

At June 10, 2010 at 8:49 PM , Blogger इस्मत ज़ैदी said...

سمندروں کا سفر کر رہا ہے مدّت سے
وہ انقلاب جو پیاسا ہے ریگ زاروں میں

आज से पहले न आ पाने के लिए जो एहसास ए ज़ियां हो रहा है उस की भर पाई यही है कि सारा कलाम आज पढ़ लिया जाए

 

Post a Comment

Subscribe to Post Comments [Atom]

<< Home